اردو ویب ڈیجیٹل لائبریری
×

اطلاع

فی الحال کتابیں محض آن لائن پڑھنے کے لئے دستیاب ہیں. ڈاؤن لوڈ کے قابل کتابوں کی فارمیٹنگ کا کام جاری ہے.

Apni Barahna Paai Par

اپنی برہنہ پائی پر


مصنف اعجاز عبید
تعداد الفاظ 8446
تعداد منفرد الفاظ 1870
مناظر 16914
ڈاؤنلوڈ 0
اس اندھیرے میں پھر دعا مانگوں جلتے سورج کا سامنا مانگوں پاؤں میں حلقۂ جنوں چاہوں چہرے پر چشمِ خواب زا مانگوں ۔۔۔شعری مجموعہ

اپنی برہنہ پائی پر

سلگتی ریت کو دو دن میں بھول جائیں نہ ہم
یہ ایک شعر ہے، اپنی برہنہ پائی پر


اب کتنی فصلیں بیت گئیں، اب یاد وہ کیا ہمیں آئیں بھی

اب کتنی فصلیں بیت گئیں، اب یاد وہ کیا ہمیں آئیں بھی
وہ زخم جو اب کی بھر بھی گئے، اب آؤ انہیں سہلائیں بھی

یہ آنکھیں خزاں میں زرد رہیں، یہ آنکھیں بہار میں سرخ رہیں
جب پھول کھلیں تو جل جائیں،جب چاند بجھے مرجھائیں بھی

وہ قافلے شاہ سواروں کے اب دھول اڑاتے گزر گئے
یہ شہر پناہ کھلی رکھو شاید کہ وہ واپس آئیں بھی

اب اور ہمیں دکھ دینے کو وہ شخص نہیں آنے والا
اب بیٹھے اپنے زخم گنیں، اپنے دل کو سمجھائیں بھی

اب تو یہ چاند بھی ڈوب چلا، اب آؤ عبیدؔ ادھر آؤ
دیکھو، یہ الاؤ جلا ہے ادھر، بیٹھو، کچھ دل بہلائیں بھی

1976ء


جس بار بھی ہم اس سے جدا ہونے لگے ہیں

جس بار بھی ہم اس سے جدا ہونے لگے ہیں
لگتا ہے گنہ گارِ جفا ہونے لگے ہیں

وہ چہرہ نظر آتے ہی کھل جاتی ہیں آنکھیں
اب خواب بہت خواب رُبا ہونے لگے ہیں

خود پر ہی چلانے کی جنھیں مشق بہم تھی
اب سارے وہی تیر خطا ہونے لگے ہیں

اب شاہ نشینوں پہ نہیں کوئی بھی منظر
اب ظلم ان آنکھوں پہ سوا ہونے لگے ہیں

آنکھوں میں چھپانے میں بہت طاق تھے جن کو
لو، دکھ وہی شعروں میں ادا ہونے لگے ہیں

1977ء


تیرے دامن کی تھی،یا مست ہوا کس کی تھی

تیرے دامن کی تھی، یا مست ہوا کس کی تھی
ساتھ میرے چلی آئی وہ صدا کس کی تھی

کون مجرم ہے کہ دوری ہے وہی پہلی سی
پاس آ کر چلے جانے کی ادا کس کی تھی

دل تو سلگا تھا مگر آنکھوں میں آنسو کیوں آئے
مل گئی کس کو سزا اور خطا کس کی تھی

شام آتے ہی اتر آئے مرے گاؤں میں رنگ
جس کے یہ رنگ تھے، جانے وہ قبا کس کی تھی

یہ مرا دل ہے کہ آنکھیں، کہ ستاروں کی طرح
جلنے بجھنے کی سحر تک، یہ ادا کس کی تھی

چاندنی رات گھنے نیم تلے کوئی نہ تھا
پھر فضاؤں میں وہ خوشبوئے حنا کس کی تھی

1977ء


کس سے ملا چاہیے، کس سے جفا پائیے، کس سے وفا کیجیئے

کس سے ملا چاہیے، کس سے جفا پائیے، کس سے وفا کیجیئے
یہ تو عجب شہر ہے، دل بھی لگائیں کہاں، کس سے لڑا کیجیئے

رات میں کرنوں کی جنگ، دشت میں اک جل ترنگ، دیدۂ حیراں کا رنگ
حلقۂ زنجیر تنگ، کیسے شعاعِ نظر اپنی رِہا کیجیئے

آشیاں کتنے بچے، کتنے گھروندے گرے، کون یہ گنتا پھرے
رات کی آندھی کے بعد سر پہ ہے دستار تو! ۔۔۔ شکر ادا کیجیئے

زور ہوا کا عجب، شور ہوا کا غضب، ٹوٹتے گرتے ہیں سب
اپنی ہی آواز تک کانوں میں آتی نہیں، کس کی سنا کیجیئے

کیسے لٹی سلطنت، کیسے مٹی تمکنت، ہم بھی کبھی شاہ تھے
جو یہ بتائے ہمیں، اب وہ رعایا کہاں، ذکر بھی کیا کیجیئے

آبلہ پا تھے تو ہم، اور بھی کچھ چاہ تھی؟ اپنی یہ کیا راہ تھی!
دشت وفا چھوڑ کر آج ہم آئے کہاں، کس سے پتا کیجیئے

شب کے مسافر عبیدؔ، ایک ہیں شاعر عبیدؔ، قانع و صابر عبیدؔ
ان کو نہ کچھ دیجیے، ان سے نہ کچھ لیجیے، شعر پڑھا کیجیے

1977ء


وہ لغت نگار بھی تھا مرا درد آشنا ہی

وہ لغت نگار بھی تھا مرا درد آشنا ہی
مری زندگی کے معنی جو رقم کئے تباہی

کوئی موڑ، شہ نشیں پر، ہو کوئی چراغ روشن
مجھے یاد جو دلا دے مرے گھر کا راستہ ہی

مرے جاں نشین لوگو، مرا ننگا سر نہ دیکھو
مرے بعد تم رکھو گے وہی میری کج کلاہی

مرے رب تو اس کے آنچل میں خوشی کے رنگ بھر دے
مجھے جس نے غم دیئے ہیں مرے ظرف سے سوا ہی

مرے آنسوؤں کے موتی، تری نور نور آنکھیں
تری آنکھ کا ہے کاجل مری رات کی سیاہی

وہ جو ایک پل لگی تھی مری آنکھ آخرِ شب
مجھے یاد آیا تیرا وہ نویدِ صبح گاہی

1977ء


تجھ چشم نمی گواہ رہیو

تجھ چشم نمی گواہ رہیو
مجھ دل کی لگی گواہ رہیو

اُن آنکھوں کی سازشیں عجب ہیں
اے سادہ دلی،گواہ رہیو

آنکھیں بھی ہیں خشک، چپ بھی ہوں میں
شائستہ لبی، گواہ رہیو

مجھ لب پہ نہ اس کا نام آیا
اے نزع دمی، گواہ رہیو

ٹھہروں بھی تو کیا زمیں رکے گی؟
پیہم سفری، گواہ رہیو

تم بِن نہ کبھی قرار آیا
بستر شکنی، گواہ رہیو

اوروں سا تمہیں بھی میں نے چاہا
تم خود بھی کبھی گواہ رہیو

1977ء


شہ مقدّر میں شہ کو مات کہاں

شہ مقدّر میں شہ کو مات کہاں
وہ کہاں، اپنی یہ بساط کہاں

چاندنی قطرہ قطرہ پی ڈالو
آج کے بعد ایسی رات کہاں

اب کسی راہ میں چراغ نہیں
اب مرے ہاتھ اس کے ہات کہاں

سنگ بن کر کہیں ٹھہر جائے
دل کی چپ میں کچھ ایسی بات کہاں

رات بھر شمع لے کے ہاتھوں میں
ایسے پھرتی ہیں راہبات کہاں

آ کے اس دل میں کچھ ٹھہر جائے
یوں بھٹکتی پھرے گی رات کہاں

صرف میدانِ کربلا ہے عبیدؔ
اب وہ دجلہ کہاں فرات کہاں

1977ء


تھی ساتھ یاد تری، تیز گام کیا کرتا

تھی ساتھ یاد تری، تیز گام کیا کرتا
قدم قدم پہ نہ رکتا تو کام کیا کرتا

اٹھا اور اُٹھ کے ترے شہر میں ہی جادہ کیا
سفر تو پاؤں میں تھا اہتمام کیا کرتا

یہی بہت ہے شکم پُر ہے اور تن پہ لباس
ترے بغیر میں کچھ تام جھام کیا کرتا

پہاڑ سی سہی، خوابوں میں بیت جاتی رات
مگر بتا کہ سحر کو میں شام کیا کرتا

زباں سکوت کی میں نے کبھی نہ سیکھی تھی
میں اپنی خلوتِ دل سے کلام کیا کرتا

ترے ہی نام کا حصہ بنا رہے تا حشر
سوائے اس کے بھلا میرا نام کیا کرتا

1977ء


گلے لگ کر مرے وہ جانے ہنستا تھا کہ روتا تھا

گلے لگ کر مرے وہ جانے ہنستا تھا کہ روتا تھا
نہ کھِل کر دھوپ پھیلی تھی نہ بادل کھُل کے برسا تھا

کبھی دل بھی نہیں، اک زخم، آنکھوں کی جگہ آنسو
کبھی میں بھی نہ تھا، بس ڈائری میں شعر لکھا تھا

وہ ہر پل ساتھ ہے میرے، کہاں تک اس کو میں دیکھوں
گئے وہ دن کہ اس کے نام پر بھی دل دھڑکتا تھا

یہاں ہر کشتیِ جاں پر کئی مانجھی مقرر تھے
ادھر سازش تھی پانی کی، ادھر قضیہ ہَوا کا تھا

چھپا کر لے گیا اپنے دکھوں کو ساری دنیا سے
لگا تھا یوں تو ہم تم سا، وہ جادوگر بلا کا تھا

1977ء


میں نے کیا کام لاجواب کیا

میں نے کیا کام لاجواب کیا
اس کو عالم میں انتخاب کیا

کرم اس کے ستم سے بڑھ کر تھے
آج جب بیٹھ کر حساب کیا

کیسے موتی چھپائے آنکھوں میں
ہائے کس فن کا اکتساب کیا

کیسی مجبوریاں نصیب میں تھیں
زندگی کی کہ اک عذاب کیا

ساتھ جب گردِ کوئے یار رہی
ہر سفر ہم نے کامیاب کیا

کچھ ہمارے لکھے گئے قصّے
بارے کچھ داخلِ نصاب کیا

کیا عبیدؔ اب اسے میں دوں الزام
اپنا خانہ تو خود خراب کیا

1977ء


ہنسنے میں رونے کی عادت کبھی ایسی تو نہ تھی

(نذر ظفرؔ)

ہنسنے میں رونے کی عادت کبھی ایسی تو نہ تھی
تیری شوخی غمِ فرقت کبھی ایسی تو نہ تھی

اشک آ جائیں تو پلکوں پہ بٹھاؤں گا انہیں
قطرۂ خوں تری عزت کبھی ایسی تو نہ تھی

کشت غم اور بھی لہرانے لگی، ہنسنے لگی
چشمِ نم تیری شرارت کبھی ایسی تو نہ تھی

کتنے غم بھول گیا، شکریہ تیرا غمِ یار
یوں مجھے تیری ضرورت کبھی ایسی تو نہ تھی

وہ مجسم بھی جو آ جائے تو دیکھوں نہ اسے
میری اس بت کی عبادت کبھی ایسی تو نہ تھی

دیر تک بیٹھے، پہ کچھ تو نے،نہ میں نے ہی کہا
جیسی تجھ سے ہے رفاقت کبھی ایسی تو نہ تھی

ایک اک شعر سے ٹپکے ہیں لہو کے قطرے
میری دشمن یہ طبیعت کبھی ایسی تو نہ تھی

1978ء


وہ مل گیا تھا رہِ خواب سے گزرتے ہوئے

وہ مل گیا تھا رہِ خواب سے گزرتے ہوئے
میں سو گیا جو تھا پھر اس کا دھیان کرتے ہوئے

میں دیکھتا رہا دستار کو سنبھالے وہاں
تمام منظرِ دیوار و در بکھرتے ہوئے

کبھی دکھا تو نہ تھا مجھ کو اس کنارے پر
مجھے یہ کون ملا ساتھ پار اترتے ہوئے

کبھی افق کے پرے جاؤں، دیکھوں شب کا سنگھار
کبھی تو دیکھو سکوں چاند کو سنورتے ہوئے

جو چار دن کے لیے گل لٹانے آیا تھا
چلا گیا وہ بہت دور اداس کرتے ہوئے

1978ء


آپ اپنا ہی دل دکھانا ہے

(ناصر کی یاد میں)

(مسلسل)

آپ اپنا ہی دل دکھانا ہے
آج پھر اس کو چھوڑ جانا ہے

آج پھر قید ہو گئے بادل
دھوپ میں پھر بدن جلانا ہے

اپنے ہاتھوں سے فرش پر گر کر
شیشے کی طرح ٹوٹ جانا ہے

پھر وہ نرگس کے زرد پھولوں کو
داغ سینے کے جا دکھانا ہے

بجھ گئے قہقہوں کے آتشدان
خود کو اشکوں سے پھر جلانا ہے

شمع کی لو پہ ہاتھ رکھتے ہوئے
پھر سلگنے کی قسمیں کھانا ہے

پھر لہو سرخ ہو گئیں راتیں
پھر اندھیرے دنوں کو آنا ہے

لمبے، میلے، سلگتے رستوں پر
اپنے قدموں کو پھر تھکانا ہے

گود میں اس اندھیری شب کے چلو
کتنا آساں اسے بھلانا ہے

لکھ کے ایسے اداس شعر عبیدؔ
اپنی تنہائی کو سنانا ہے

(ق)

رات آئے تو بھیگے تکیے پر
خواب کی رہ میں شب بِتانا ہے

چلو آنکھیں تو اب بھی اپنی ہیں
خواب میں ہی پھر اس کو آنا ہے

کتنے شاداب ہیں یہ شب کے چِنار
ہم کو ملنے وہیں تو جانا ہے

1978ء


کچھ دعا بار یاب بھی دیکھوں

کچھ دعا بار یاب بھی دیکھوں
زندگی کے عذاب بھی دیکھوں

خشک آنکھیں ہوں تو مقابلتاً
کوئی گنگا چناب بھی دیکھوں

جو نہ کہہ پایا، لکھ دیا سارا
جو نہ دیکھا وہ خواب بھی دیکھوں

کچھ تو فرصت دے دل کی سوختگی
آبلوں کا حساب بھی دیکھوں

خواہشیں ختم ہو چکیں ساری
نیند آئے تو خواب بھی دیکھوں

مدتوں سے نہیں ملی فرصت
کچھ غزل کی کتاب بھی دیکھوں

کون سا سند باد ہوں میں عبیدؔ جو سفر کامیاب بھی دیکھوں

1978ء


بجھ گئے بام دور نیند آنے لگی، شام کو اور ہم جاگتے رہ گئے

بجھ گئے بام دور نیند آنے لگی، شام کو اور ہم جاگتے رہ گئے
ڈور یادوں کی لے کر جو الجھی تھی یوں، ہاتھ میں صرف اپنے سِرے رہ گئے

شعر میرے، ترا پیار تھا جانے کیا، اسمِ اعظم تھا یا اللہ دیں کا دِیا
سب سے پہلے مجھے کیسے منزل ملی، راستے میں سبھی قافلے رہ گئے

چند راتوں کا کاجل، دِنوں کی چمک، چند خوابوں کے پھولوں کی جنگلی مہک
میں تو دست تہی اُن سے رخصت ہوا، میرے پیچھے بہت سلسلے رہ گئے

دل کے آنگن میں کل شب تماشہ ہوا، چاندنی مثلِ پازیب بجتی رہی
بربط و نغمہ و جام سب تھے مگر، صبح تک جھیل میں دائرے رہ گئے

گنگنانے لگیں گھر کی انگنائیاں، بج اٹھیں پائیں باغوں میں پُروائیاں
مدتوں بعد شعر اترے یوں عرش سے، کہکشاں کہکشاں راستے رہ گئے

1978ء


جو جا چکے ہیں غالباً، اتریں کبھی زینہ ترا

(ابن انشاء اور خلیل الرحمٰن اعظمی کی یاد میں)

جو جا چکے ہیں غالباً، اتریں کبھی زینہ ترا
اے کہکشاں! اے کہکشاں! روشن رہے رستا ترا

خونابۂ دل کی کشید، آخر کو ترے دم سے ہے
کہنے کو میرا مے کدہ، لیکن ہے مے خانہ ترا

پل بھر میں بادل چھا گئے اور خوب برساتیں ہوئیں کل چودھویں کی رات میں کچھ یوں خیال آیا ترا

"اے زندگی اے زندگی" "کچھ روشنی کچھ روشنی"
چِلّا رہا تھا شہر میں مدت سے دیوانہ ترا

اب گایکوں میں نام ہے، ورنہ جو اپنے گیت تھے
وہ سارے دل کے زخم تھے، دراصل احساں تھا ترا

غزلیں مری تیرے لیے یادیں تری میرے لیے
یہ عشق ہے پونجی مری، یہ شعر سرمایہ ترا

1978ء


تھا وہ جنگل کہ نگر یاد نہیں

تھا وہ جنگل کہ نگر یاد نہیں
کیا تھی وہ راہگزر یاد نہیں

یہ خیال آتا ہے، میں خوش تھا بہت
کس طرف تھا مرا گھر یاد نہیں

کیا تھی وہ شکل، پہ بھولی تھی بہت
پیارا سا نام تھا، پر یاد نہیں

زخموں کے پھول ہیں دل میں اب بھی
کس نے بخشے تھے، مگر یاد نہیں

اک گھنی چھاؤں میں دن بیتا ہے
شب کہاں کی تھی بسر، یاد نہیں

ایک لمحہ تو دھڑکتا ہے ضرور
کئی صدیوں کا سفر یاد نہیں

طاق تھے داستاں کہنے میں عبیدؔ
اب بجز دیدۂ تر، یاد نہیں

1978ء


مہک اٹھے گا گل موج سے سمندر بھی

مہک اٹھے گا گل موج سے سمندر بھی
جو فصل آئی تو مہکیں گے رہ کے پتھر بھی

سزا ملی ہے مجھے اپنے جھوٹ کی شاید
کہ جی رہا ہوں، ابھی تک میں تجھ کو کھو کر بھی

نہ فصلِ گل ادھر آئی نہ کشتِ زخم پھلی
نہ سینچ پائی اسے جوئے دیدۂ تر بھی

اب اور رنگ نہیں خوں میں تر سحر کے بعد
لو آج ٹوٹ گیا بازِ شب کا شہ پر بھی

دریچۂ شبِ ہجراں کا فضل ہے یہ عبیدؔ
وہ شعر اُترے ہیں، مرہم بھی ہیں جو نشتر بھی

1978ء


اس اندھیرے میں پھر دعا مانگوں

اس اندھیرے میں پھر دعا مانگوں
جلتے سورج کا سامنا مانگوں

پاؤں میں حلقۂ جنوں چاہوں
چہرے پر چشمِ خواب زا مانگوں

سر کا سودا تو رائیگاں ٹھہرا
پیر میں کوئی سلسلہ مانگوں

پا شکستہ کھڑا ہوں تیرے حضور
اب ہتھیلی میں آبلہ مانگوں

کیا خبر کوئی معجزہ ہو جائے
آج میں ننگے سر دعا مانگوں

کچھ، بجز خود، میں دے سکوں نہ تجھے
تجھ سے میں کیا ترے سوا مانگوں

سخنِ خوں چکاں ہی لکھوں عبیدؔ
عشق کی اور کیا سزا مانگوں

1978ء


دل کو کیسی بے چینی ہے

دل کو کیسی بے چینی ہے
کیا جنگل میں آگ لگی ہے

کیا کیا نہ تجھ کو میں نے ستایا
اب چپ ہوں، جب سزا ملی ہے

تیرے ہاتھوں میں سونا ہے
میرے ہاتھوں میں مٹی ہے

ہاتھوں پر ترے ہونٹ نہیں ہیں
خوابوں والی رات ڈھلی ہے

کھلیانوں میں رکھ دو یادیں
ہوا یہ فصل جلا دیتی ہے

تجھ سے کیا کیا گلے کئے تھے
بدلے میں بس دعا ملی ہے

فصلِ گل رستے میں ہو شاید
آنکھوں میں کچھ نمی نمی ہے

ابھی ابھی محسوس ہوا ہے
تو کھڑکی سے جھانک رہی ہے

اب تو کانٹے بونے ہوں گے
پھولوں کی رُت بیت چلی ہے

میں خود اپنے پاس نہیں ہوں
کیسی ستم کی تنہائی ہے

کہتا ہوں پل پل ساتھ گزارا
لیکن یہ سب تحریری ہے

خط بھیجوں، خود آؤں نہ آؤں
کہہ دے جو تیری مرضی ہے

تیرے بنِا میں بدل گیا ہوں
مجھ سے جدا تو پھر بھی وہی ہے

میں بھی دیوانہ پاگل ہوں
تو بھی بے حد جذباتی ہے

میرے بنا کیا کھایا تو نے
جانے کیا ساری پہنی ہے

یہ میرا کیا پاگل پن ہے
کیسی الٹی سوچ لگی ہے

تم بھی عبیدؔ اب تو سو جاؤ
رات کو بھی نیند آنے لگی ہے

1978ء


رات تھی اور گھنا بن تھا

(روح ناصر کے نے ایک اور غزل)

رات تھی اور گھنا بن تھا
دل کا کیا وحشی پن تھا

پیار میں کیا کیا لڑتے تھے
ہم میں کتنا بچپن تھا

تو مرے گیتوں کی لے تھی
میں ترے پاؤں کی جھانجھن تھا

ہم دونوں زنجیر بپا
کیسا اپنا بندھن تھا

آگ تو تھی جنگل میں لگی
میں کیوں اس میں ایندھن تھا

پتوں کے گھنگھرو سے بجے
ورنہ گُپ چُپ آنگن تھا

ہلتے ہاتھ جو نیچے آئے
پھر سونا اسٹیشن تھا

1978ء


پردۂ خزاں کے آر پار کون ہے؟

پردۂ خزاں کے آر پار کون ہے؟
گرد اڑا گیا جو شہسوار کون ہے؟

اِس طرف تو بس گئے ہیں صرف اُس کے رنگ
دیکھتا ہوں آئینے کے پار کون ہے؟

یہ خزاں کے پاؤں کی صدا کے ساتھ ساتھ
گا رہا ہے نغمۂ بہار کون ہے؟

راہ میں بکھر گئے دھنک کے سات رنگ
رنگ جس کے ہیں وہ گُل عذار کون ہے؟

ہر کتاب سے مٹا رہے ہیں ایک نام
کیا چھپاتے ہیں، وہ طرحدار کون ہے؟

سرخ سرخ نیلے نیلے پیلے پیلے پھول
یہ قبا ہے کس کی، یہ بہار کون ہے؟

میں تو ہوں فصیل کے اِدھر کھڑا عبیدؔ
خوں میں تر یہ پیشِ کوئے یار کون ہے؟

1978ء


رنگ کیا کیا بکھیر کر کوئی

رنگ کیا کیا بکھیر کر کوئی
یاں سے گزرا تھا خوں میں تر کوئی

دل کھنڈر کر گیا ہے راتوں رات
بسنے آیا تھا اپنے گھر کوئی

شام تک کیا بسا بسایا تھا
رات کو لُٹ گیا نگر کوئی

شام آئے تو گدگدائے اسے
چُپ سی بیٹھی ہے دوپہر کوئی

مدّتوں پر ملے ہے ایسا شخص
جان کھوتا ہے جان کر کوئی!

میں نے کھڑکی سے چھپ کے دیکھا تھا
صحن میں ننگے پاؤں ڈر کوئی

(ق)

اب نکل کر کہیں نہ جائے گا
لوٹ آیا ہے اپنے گھر کوئی

اب تو دن کو بھی نیند آنے لگی
اب نہیں پاؤں میں سفر کوئی

آج دیکھا کہ ختم ہوتی ہے
چلتی جاتی تھی رہگزر کوئی

خوف کے سائرن خموش ہوئے
اب نہیں شہر میں خطر کوئی

1978ء


آس بر آئی تھی پانی کی مگر روشن رہا

(علی گڑھ 79۔1978)

آس بر آئی تھی پانی کی مگر روشن رہا
خار و خس جلتے رہے ہر بام و در روشن رہا

کتنی امیدوں کے لوباں خوشبوئیں دیتے رہے
سرخ شعلوں سے جو گھر گھر رات پھر روشن رہا

کیسی کیسی قدِّ آدم مشعلیں جلتی رہیں
کیسی دیوالی تھی کل، سارا نگر روشن رہا

اس کنارے سے بندھی سب کشتیاں جلتی رہیں
اور یہ دریا کا کنارہ، بے خبر، روشن تہا

رات کیسا چاند اترا تھا مری انگنائی میں
کوئی سایہ تک نہ تھا اور سارا گھر روشن رہا

وہ مرا دارالاماں تھا یا تھا جانے کیا عبیدؔ
کچھ تو صحرا کے پرے تھا، تا سحر روشن رہ

1979ء


ٹھیک کہا، یوں دل ہی کسی سے لگائے کون

ٹھیک کہا، یوں دل ہی کسی سے لگائے کون
ایک دیا جب جل ہی گیا تو بجھائے کون

آئینہ ہی بدلا بدلا لگتا ہے
اپنے پر جھوٹا الزام لگائے کون

کرفیو ہے اور گشت سپاہی کرتے ہیں
یادوں کی سنسان ڈگر پر جائے کون

میں تو اپنے اندر اندر جلتا ہوں
شعر سنا کر محفل کو گرمائے کون؟

اب یہ مکھوٹا چہرے جیسا لگتا ہے
اب اپنے اس خول سے باہر آئے کون؟

کس کو وقت مزار پہ فاتحہ پڑھنے کا
دل کے قبرستان میں عود جلائے کون؟

وہ تو یہ بستی چھوڑ چکا اب یہاں عبیدؔ
نئے نئے ملبوس پہن کر آئے کون؟

1979ء


پتہ نہیں کہ مجھے واقعی محبت ہے

پتہ نہیں کہ مجھے واقعی محبت ہے
مگر وہ میرے لیے اک اہم ضرورت ہے

وہ غیر کب ہے جو شکوہ کروں جدائی کا
وہ مجھ میں ہے، مجھے کیوں اپنے سے شکایت ہے

خزاں کا بوجھ اٹھائے جھکی ہوئی اک شاخ
یہ لگ رہا ہے مجھے، میری ہی علامت ہے

یہ پیڑ جیسے مری فوج کے سپاہی ہیں
یہ سبز سبز سمندر مری حکومت ہے

خدا بھی خوش ہے بہت آسماں پہ بیٹھا ہوا
یہاں مجھے بھی کسی سے نہ کچھ شکایت ہے

بِتا دئے کئی دن جس کے ساتھ اب اس سے
عجیب لگتا ہے کہنا "مجھے محبّت ہے"

ہمارے بعد کئی شہ گزر گئے لیکن
غزل کے شہر میں پھر اپنی بادشاہت ہے

جو ایک نار کو دل دے دیا، سو ٹھیک مگر
میاں ہٹاؤ۔ یہ سب شاعری حماقت ہے

یہ سرخ جنگلی پودے کنارِ آب عبیدؔ
کسی کے چہرے کی ان میں بڑی شباہت ہے

1980ء


محفل یاراں ـــــــ خوشی، غم سارے مدغم ہو گئے

محفل یاراں ـــــــ خوشی، غم سارے مدغم ہو گئے
قہقہے ایسے لگے، سب دیدۂ نم ہو گئے

دھوپ تھی تو نیلے پیلے پھول روشن تھے تمام
رات کیا آئی کہ سارے رنگ مدھم ہو گئے

اک نظر سے زیر اس نے کر دئے کیا کیا جواں
ہائے کیسے کیسے شعلے تھے کہ شبنم ہو گئے

زخم مہکا اور نم نمکیں ہوا چلنے لگی
شعر کہنے کے سبب سارے فراہم ہو گئے

رنگ تھا وہ یا کوئی خوشبو تھی یا سُر تھا عبیدؔ
خیر مقدم کو حواس اپنے جو باہم ہو گئے

1980ء


وہ ہولیاں منانے والے کس طرف چلے گئے

دوغزلہ۔ا(قحط زدہ گاؤں میں غزل)

وہ ہولیاں منانے والے کس طرف چلے گئے
وہ تعزئے اٹھانے والے کس طرف چلے گئے

سویرے گاؤں کی فضا کا وہ دھواں کہاں گیا
وہ بیل دھول اڑانے والے کس طرف چلے گئے

یہ پنگھٹوں کو کیا ہوا۔ جو چُپ سی لگ گئی انہیں
وہ رنگ دل لبھانے والے کس طرف چلے گئے

پہاڑیوں پہ چرنے والی بکریاں کدھر گئیں
وہ بانسری بجانے والے کس طرف چلے گئے

وہ "پیاس پیاس" چیختی ٹٹہرباں کہاں گئیں
وہ ہنس موتی کھانے والے کس طرف چلے گئے

الاؤ جل رہا ہے اور لوگ سب خموش ہیں
وہ ماہیا سنانے والے کس طرف چلے گئے

تڑخ رہی ہے گرم دھرتی پیر کس طرف رکھیں
وہ میگھ راگ گانے والے کس طرف چلے گئے

1980ء


وہ ہاتھ گدگدانے والے کس طرف چلے گئے

دو غزلہ،دو

وہ ہاتھ گدگدانے والے کس طرف چلے گئے
وہ بچے چہچہانے والے کس طرف چلے گئے

وہ چار دن کی چاندنی تھی یہ اندھیری رات ہے
وہ جگنو جگمگانے والے کس طرف چلے گئے

جو ہاتھ خشک بالوں کو سنوارتے تھے کیا ہوئے
سکوں کی نیند لانے والے کس طرف چلے گئے

کتابوں میں لکھا تھا، ایسے ہی یُگوں میں آئیں گے
وہ جو نبی تھے آنے والے، کس طرف چلے گئے

ادھر تو شہرِ گریہ ہے، فصیل کے اُدھر مگر
وہ ہونٹ مسکرانے والے کس طرف چلے گئے

ہر اک طرف پکار دیکھا کوئی بھی نہیں یہاں
وہ بستیاں بسانے والے کس طرف چلے گئے

1980ء


ایک اک کر کے ہر اک زخم دہائی دے گا

ایک اک کر کے ہر اک زخم دہائی دے گا
یہ سفر کچھ نہ سوا آبلہ پائی دے گا

اک ذرا اور بلندی پہ چڑھو۔ پھر دیکھو
رات کو شہر بھی آکاش دکھائی دے گا

بجتے بجتے سبھی اک لمحے میں تھم جائیں گے ساز
پھر یگوں کچھ بھی کسی کو نہ سنائی دے گا

پیار کے پھول میں ہر دن نے بھرا اک نیا رنگ
اگلا دن اب اسے اک رنگِ جدائی دے گا

آخرش طے کیا ناکردہ کو بھی کرے قبول
یوں کہاں تک وہ بھلا روز صفائی دے گا

وہ کئی نوری برس دور تھا، یہ کیا تھی خبر
میرے کاندھوں پہ رکھے ہاتھ دکھائی دے گا

1980ء


اشک تھا یا شرار تھا، کیا تھا

اشک تھا یا شرار تھا، کیا تھا
کچھ سرِ چشمِ یار تھا، کیا تھا

لب تلک نام بھی نہ آیا کبھی
دل میں کچھ پاسِ یار تھا، کیا تھا

ہم تھے تنہا کہ قافلہ بھی تھا
اپنے آگے غبار تھا، کیا تھا

اک دیا سا کہیں چمکتا تھا
کچھ سرِ رہگزار تھا، کیا تھا

لو نہتّی ہوئی سپاہ تمام
ایک تنہا سوار تھا، کیا تھا

اب بھی امید تم کو کیا تھی عبیدؔ
دل میں کچھ اعتبار تھا، کیا تھا

1981ء


خامشی یوں ڈرا رہی ہے ہمیں

خامشی یوں ڈرا رہی ہے ہمیں
اک ندا ہے بلا رہی ہے ہمیں

بن گئے گیت کس کے سُر سے ہم
زندگی گنگنا رہی ہے ہمیں

ڈوبنے آئے تھے،مگر یہ ندی
بہتے رہنا سکھا رہی ہے ہمیں

پہلے جو لوریاں سناتی تھی
یاد اس کی جگا رہی ہے ہمیں

اب تو یہ یاد بھی نہیں ہم کو
یاد یہ کس کی آ رہی ہے ہمیں

غمِ یار آ لپٹ کے سو جائیں
رات لوری سنا رہی ہے ہمیں

پھر کوئی شعر اترنے والا ہے
دن میں بھی نیند آ رہی ہے ہمیں

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائے صبح عبیدؔ
آ کے پھر تھپتھپا رہی ہے ہمیں

1981ء


کیا رنگ بھلا دستِ ستم گر میں نہیں تھا

کیا رنگ بھلا دستِ ستم گر میں نہیں تھا
جاں زیب کوئی زخم مقدّر میں نہیں تھا

کل "چھم" سے اچانک مرے آنگن میں وہ آیا
اور شومیِ تقدیر کہ میں گھر میں نہیں تھا

کیا پیش کروں میں تری آنکھوں کا جواب اب
ایسا دُرِ خوش آب سمندر میں نہیں تھا

بے موسم گُل اس نے جو فرمائشِ گل کی
اک برگِ خزاں میرے مقدر میں نہیں تھا

یہ پیچ کہاں سے مری تقدیر میں آیا
وہ خم جو ترے گیسوئے عنبر میں نہیں تھا

خوشبوئیں عبیدؔ ایک سی ساری نہیں ہوتیں
جو تھا ترے بالوں میں، گلِ تر میں نہیں تھا

1981ء


عبیدؔ کیا ہوا غزلیں سنا رہا ہے بہت

عبیدؔ کیا ہوا غزلیں سنا رہا ہے بہت
جو خوش کرے ہے، تو دل بھی دُکھا رہا ہے بہت

بس ایک رنگِ شفق ذہن میں ہے، نام نہ نقش
وہ کون شخص ہے جو باد آ رہا ہے بہت

ہے ایک ترکِ تعلق کا نشّہ صرف اسے
ہمیں تو اس سے سدا واسطہ رہا ہے بہت

ہم اپنے دل سے کہیں کیا۔ عجیب پاگل ہے
شبِ فراق ہے اور گنگنا رہا ہے بہت

اے رنگِ پیرہنِ یار۔ یہ ہے دورِ خزاں
خیال رُت کا نہیں، گل کھلا رہا ہے بہت

ہم اب نہ بھول کے بھی یاد اسے کریں گے عبیدؔ
جو وعدہ کر کے سدا بھول جا رہا ہے بہت

1981ء


یہ دن ایسے ستم گر ہو گئے ہیں

یہ دن ایسے ستم گر ہو گئے ہیں
ہم اپنے گھر میں بے گھر ہو گئے ہیں

مری آنکھوں سے جو نکلے تھے آنسو
تری آنکھوں میں گوہر ہو گئے ہیں

جہاں اک دن دھنک لہرائی اس نے
ہم اس رستے کے پتھر ہو گئے ہیں

صدا اپنے ہی در پر دے رہے ہیں
عجب پاگل گداگر ہو گئے ہیں

لہو سے یوں لکھو گے شعر کب تک
اُٹھو دفتر کے دفتر ہو گئے ہیں

کریں تبلیغِ دینِ عشق گھر گھر
عبیدؔ اب تو پیمبر ہو گئے ہیں

1981ء


ابھی کھلا تھا گلِ عشق، پل میں مر بھی گیا

ابھی کھلا تھا گلِ عشق، پل میں مر بھی گیا
ابھی چڑھا نہ تھا دریا، ابھی اتر بھی گیا

کبھی گری تو تھی دستار اپنی پہلے بھی
ان آندھیوں میں تو اس بار اپنا سر بھی گیا

تری قبا کا کوئی گل، کہ آنکھ کا موتی وہ کیا تھا جو شب ہجراں میں رنگ بھر بھی گیا

میں تیرے خواب سے چونکا کہ جیسے تو آئی
مگر وہ جھونکا بہت نرم رو گزر بھی گیا

عبیدؔ جیتا رہا عمر زندگی کے بغیر
نہ آئی موت بھی، لیکن وہ آج مر بھی گیا

1982ء


ہم ہوں تنہا تو نہیں دشت کی پنہائی بہت

ہم ہوں تنہا تو نہیں دشت کی پنہائی بہت
ساتھ تیرا ہو تو چھوٹی سی یہ انگنائی بہت

اک یہی ہے مرا سرمایہ اسے بھی لے لے
تیری بے مہری سلامت ہے تو رسوائی بہت

چاندنی شب بھی نہ تھی آج،نہ رُت پھولوں کی
کیوں چلی ایسی ہوا، یاد تری آئی بہت

یہ نہ تھی پہلی دفعہ کی تو جدائی کوئی
جانے کیوں آج طبیعت مری گھبرائی بہت

تجھ سے بچھڑیں کہ کوئی اور بہانہ مل جائے
ہم کو رہتی ہے سدا غم سے شناسائی بہت

1982ء


مجھے چاہے جتنا رلائے تو،تجھے دیکھ کر میں ہنسا کروں

مجھے چاہے جتنا رلائے تو،تجھے دیکھ کر میں ہنسا کروں
میں نبی ہوں مذہبِ عشق کا، ترے حق میں صرف دعا کروں

ترا نام دن کے نصاب میں، ترا نام رات کے خواب میں
ترا نام لوں تو میں سو سکوں، ترا نام لے کے جگا کروں

تیرا ایک چھوٹا سا پیار بھی مرا مایہ ہے مرا جام جم
تجھے سامنے جو نہ پاؤں میں تو اسی میں تجھ کو تکا کروں

ترا سرخ و سرمئی پیرہن مرے دل کی آنکھ میں سج گیا
میں بھی زخمِ دل کی قبا پہن، تری یاد بن کے سجا کروں

یہ مرا قلم مرے ہاتھ ہیں، تو نہیں تو یہ مرے ساتھ ہیں
انہیں اپنے ہونٹوں سے چوم کر تجھے روز چٹھی لکھا کروں

میں نہتّا،بے سپر،اسلحہ مرا صرف جلنے کی آرزو
میں چراغِ شب ہوں عجیب شے کہ غنیمِ شب سے لڑا کروں

زرِ ارض کے لیے دشت و در، سبھی چھان دیکھے، کمایا زر
یہ غزل ہے مفت کا اک ہنر کبھی یہ بھی کام کیا کروں

1982ء


یہ زمیں کس کی ہے، یہ فصل بتا کس کی ہے

یہ زمیں کس کی ہے، یہ فصل بتا کس کی ہے
دل چمن ہو گیا یہ ’’کُن‘‘ کی صدا کس کی ہے

مختلف رنگ کے ہر سمت اڑے ہیں چھینٹے
کون اس راستے گزرا یہ قبا کس کی ہے

سانجھ اب ہو چلی چو دیس، کہاں بیٹھے ہو
گھر چلو، یہ اب بھی یہ امّید بھلا کس کی ہے

پردۂ شب سے لپٹ سو گئی ساری دنیا
جاگتی جاگتی سی ایک صدا کس کی ہے

سامنے آئے تو دیکھوں کہ برنگِ گُلِ تر
گرم رت میں یہ خنک بوئے حنا کس کی ہے

سرخ اور دھند بجز کچھ بھی نظر آتا نہیں
کس کا سر ہے لہو آلود، ردا کس کی ہے

بھول کھل اٹھتے ہیں جب یاد کوئی آتا ہے
چمن دل میں سُبک سیر صبا کس کی ہے

بے سُرا شور ہے ہر سو عجب آوازوں کا
یہ مگر ایک صدا سب سے جدا کس کی ہے

1983ء


ہاتھوں میں تھے اس کے ہات کچھ دیر

(ناصر کاظمی کی روح کے لیے)

ہاتھوں میں تھے اس کے ہات کچھ دیر
ٹھہری رہی کائنات کچھ دیر

اک لمبی طویل رات کے بعد
اک رات وہ آئی رات کچھ دیر

کرنوں کا جلوس، چاند ڈولی
آنگن میں رہی برات کچھ دیر

پھر پھول اگے، بہار جاگی
مہکی سی رہی یہ رات کچھ دیر

کیا ماتھے کا چاند کھِل رہا تھا
بھولے رہے غم کی رات کچھ دیر

اے صحنِ چمن گواہ رہنا
وہ گل رہا میرے سات کچھ دیر

پو پھٹتے ہی کیا اُلٹ گئی ہے
بچھتی ہے سدا بساط کچھ دیر

بیٹھو بھی ذرا رقیب پیارے
کرتے رہو اس کی بات کچھ دیر

اپنے کو لیے رہو گے کب تک
ہوتے ہیں تکلّفات کچھ دیر

اک شب تو حسابِ زخم دیکھوں
تھم جائیں جو حادثات کچھ دیر

اب آج دنوں پہ شعر کہہ کے
کچھ دِل کو ملا ثبات کچھ دیر

1983ء


یوں بھی ہوئی ہے غم سے محبّت کبھی کبھی

یوں بھی ہوئی ہے غم سے محبّت کبھی کبھی
ہم سے ہوئی نہ اس کی شکایت کبھی کبھی

یوں گُم تھا دِل، شناخت نہیں کر سکے اُسے
جب آئی سامنے تری صورت کبھی کبھی

تڑخی ہوئی زمیں تھی جہاں، آج جھیل ہے
یوں بھی رحیم ہوتی ہے فطرت کبھی کبھی

اب تجھ کو کیا بتائیں، کہ اپنے ہی شعر میں
محسوس کی ہے تیری شباہت کبھی کبھی

یہ عشق اپنے واسطے سودا نہ تھا عبیدؔ
خوش بختوں کو ملی ہے یہ دولت کبھی کبھی

1984ء


جھونکے پہ تیرا شک ہو، یہ سوچا نہ تھا کبھی

جھونکے پہ تیرا شک ہو، یہ سوچا نہ تھا کبھی
میں منتظر رہا۔۔۔ مگر ایسا نہ تھا کبھی

خوش وقتوں کے ہجوم میں گاتے تھے جھوم جھوم
یہ بات تب کی ہے، تجھے دیکھا نہ تھا کبھی

اک گھر ہو جس میں چین کی بنسی بجائیں ہم
تب چاہتے تھے جب تجھے چاہا نہ تھا کبھی

راوی! کبھی تو چین بھی لکھ۔۔ کیا نصیب میں
اِس دِل سے اُس کی یاد بھُلانا نہ تھا کبھی؟

اے قیس!۔۔۔ اخی! بتا کہ ستاتا ہے یوں ہی عشق؟
ہم نے تو دل میں روگ یہ پالا نہ تھا کبھی

یاروں نے لکھ کے ناولیں رکھ دیں دوکان میں
ہم نے تو اُس کا نام بھی لکھّا نہ تھا کبھی

1984ء


پھر لوٹ کر آئے یا نہ آئے

پھر لوٹ کر آئے یا نہ آئے
ایسا نہ ہو شام بیت جائے

دو نام درختوں پر لکھے تھے
گوری رہی کنج میں لجائے

ہر گل کو بسا کے رکھ لوں دل میں
شاید کہ بہار پھر نہ آئے

بکھرے پھر موتی آنسوؤں کے
جیسے کوئی ہار ٹوٹ جائے

بیماریِ دل عجب مرض ہے
اے چارہ گرو،کوئی اُپائے؟

شاید کہ میں تجھ کو بھول جاؤں
لب پر جو نہ تیرا نام آئے

1985ء


سفر میں درد کا سورج مجھے جلائے بھی

سفر میں درد کا سورج مجھے جلائے بھی
نہالِ غم کے تلے مجھ کو چین آئے بھی

ہیں اک خطِ متوازی یہ تیری یاد اور دل
کبھی قریب جو آئے تو دور جائے بھی

جو جاگتا ہوں تو یادوں کی تھپکیاں ہیں بہت
جو سو رہا ہوں تو کوئی مجھے جگائے بھی

نہیں ہے نور، سلگتا ہوا دیا ہوں میں
وہ پہلے پانی کی اک بوند اب تو آئے بھی

"وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا"
وہ بات شعر کے پردے میں چھپ کر آئے بھی

1986ء


میں سوچتا تھا اسے آج ٹالنے کے لیے

میں سوچتا تھا اسے آج ٹالنے کے لیے
پھر آئی یاد، مرا گھر سنبھالنے کے لیے

مری سرشت نہیں تھی کہ منّتیں کرنا
خود آئی موج یہ موتی اچھالنے کے لیے

میں خود ہی پھانس چبھو بیٹھا دل میں، جاتا تھا
کسی کے پاؤں سے کانٹا نکالنے کے لیے

وہ موتیوں بھری موجیں مجھے ڈبو کے گئیں
میں مر رہا تھا سمندر کھنگالنے کے لیے

یہ غم تھا پہلے وہ پل بھر کو آ کے مل جائے
وہ آ کے دے گیا دکھ اور پالنے کے لیے

وہ پرسں اپنا جھلاتی چلی گئی دفتر
مجھی کو چھوڑ گئی گھر سنبھالنے کے لیے

1986ء


کبھی تو دھوپ کبھی ابر کی رِدا مانگے

کبھی تو دھوپ کبھی ابر کی رِدا مانگے
یہ کشتِ غم بھی عجب موسم و ہوا مانگے

فقیر جھولی کی کلیاں لٹانے آیا ہے
امیر شہر کو ڈر ہے نہ جانے کیا مانگے

کبھی ہو دورِ قناعت تو حالِ بد میں بھی خوش
جو مانگنے پہ دل آئے تو بارہا مانگے

قدم رکیں تو لہو کا بہاؤ رک جائے
شکستہ پا بھی پہاڑوں کا سلسلہ مانگے

میں جس تلاش میں تھک کر خموش بیٹھ رہا
وہ مل گیا ہے خزینہ مجھے بِنا مانگے

جو میرے ہاتھوں میں ہاتھ آ گئے وہ رنگ بھرے
یہ دل کہ بھاگتے لمحوں کو تھامنا مانگے

1986ء


سنگم سے لے کے غارِ حرا تک چلا گیا

سنگم سے لے کے غارِ حرا تک چلا گیا
میں جادۂ وفا سے فنا تک چلا گیا

گم صم ہوں آج دیکھ کے ویرانیِ چمن
اب کی خزاں میں برگِ نوا تک چلا گیا

یوں سوختہ دلوں کی فلک تک رسا ہوئی
اٹھتا دھواں نواحِ خلا تک چلا گیا

مثلِ ہوا نہیں ہیں مری سرحدیں کہیں
میں جب بھی چل پڑا تو ورا تک چلا گیا

دریا میں کچھ نہیں ہے بجز شامِ زر نگار
اس آبِ زر میں نقشِ ہوا تک چلا گیا

بیکار ہی رہا مرا پیڑوں تلے قیام
عرفان کے لیے میں گیا تک چلا گیا

1986ء


سیلاب نے جو پہلے کنارا مٹا دیا

سیلاب نے جو پہلے کنارا مٹا دیا
ساحل کی گرتی ریت نے دریا مٹا دیا

ان رخ گُلوں کا ذکر ہی کیا، وہ ہوا چلی
آندھی نے برگِ نقشِ کفِ پا مٹا دیا

میں نے تو کچھ کہا بھی نہ تھا، ہاں بس ایک بار
کاغذ پر اس کا نام لکھا تھا، مٹا دیا

بکھرے ہیں چاروں سمت ہی پتّے ورق ورق
طفلِ خزاں نے کیا لکھا، کیا کیا مٹا دیا

یاد آتی تھی وہ شکل بس اک پل کہ وقت نے
مدّت پہ دل میں نقش بنا تھا، مٹا دیا

میں تھا بس ایک قطرۂ شبنم پہ نوکِ خار
جس کو کہ تیز دھوپ نے پیاسا مٹا دیا

1986ء


سوائے پیشۂ عشق اور معاش کیا کرتا

سوائے پیشۂ عشق اور معاش کیا کرتا
ترے بغیر کہیں بود و باش کیا کرتا

مدارِ پا مجھے پھِرتا تھا شہر شہر لیے
وہ شخص تھا مرے دل میں، تلاش کیا کرتا

وہ شخص تو مرا ہمزاد تھا، مری جاں تھا
جو اس نے راز دیا تھا، وہ فاش کیا کرتا

گدا سمجھ کے امیرانِ شہر دے گئے بھیک
میں تیرے در پہ پڑا تھا فراش، کیا کرتا

یہ سوچنے کے سوا اور کچھ نہ کر پایا
یہ کرنا کاش، وہ کرتا میں کاش، کیا کرتا

1986ء


یوں تو اشکوں کا ہر اک قطرہ کراماتی ہے

یوں تو اشکوں کا ہر اک قطرہ کراماتی ہے
چشمِ تر سوختہ دل کے لئے نا کافی ہے

لاکھ ناراض ہو وہ ہم سے، تسلّی ہے مگر
شعلۂ گل کے تلے سبزہ ابھی باقی ہے

بند کر دو کہ یہ تصویریں بکھر جائیں گی
اس دریچے سے بہت تیز ہوا آئی ہے

صرف اک ربطِ وفا، اور نہ کچھ میں مانگوں
تجھ کو ہر قول و عمل کے لیے آزادی ہے

"میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں"
جاں کہ پھر آبلۂ دل کی تمنّائی ہے

کیا عجوبہ ہے طنابیں تو تنی ہیں لیکن
خیمۂ جاں ہے کہ یہ شعلوں کی برساتی ہے

1986ء


کیسا جادو ہے کہ ایسے پسِ دیوار کہاں تھا پہلے

کیسا جادو ہے کہ ایسے پسِ دیوار کہاں تھا پہلے
دل وہ وحشی تھا کسی طور گرفتار کہاں تھا پہلے

اب ودیعت ہوا ورثہ مجھے قیس ابن ابی عامر کا
مرضِ عشق مری جان کا آزار کہاں تھا پہلے

اب یہ دستور نیا ہے کہ وہ شہ ہوگا لئے ہو جو صلیب
ایک اک شہر کا سردار سرِ دار کہاں تھا پہلے

دکھ کی بستی کو بسے ہو چکے یوں سال ہزاروں لیکن
اپنا یہ مرتبہ، یہ منصبِ شہ وار کہاں تھا پہلے

کیا نئی رُت ہے کہ کانٹوں کے گلستاں کے گلستاں اُگ آئے
اب سفر قریۂ جاں کا جو ہے دشوار کہاں تھا پہلے

1986ء


ویسے تو ہم نے تجھ سے محبت بھی کی بہت

ویسے تو ہم نے تجھ سے محبت بھی کی بہت
لیکن قبول جرم، شرارت بھی کی بہت

لے کر کہاں کہاں پھِرے ابیات کی کتاب
ہم نے دیارِ غم کی سفارت بھی کی بہت

پائے وفا میں آ ہی گئیں تھک کے لغزشیں
در دشتِ نجدِ عشق مسافت بھی کی بہت

آخر کو آ کے جم ہی گئے دل کے گھر میں سب
ہم نے کچھ ان دُکھوں سے مروّت بھی کی بہت

یہ کاروبارِ عشق ہی سودا زیاں کا تھا
کچھ خرچِ نقدِ دل میں کفایت بھی کی بہت

ہم موتیوں کے ڈھیر لٹائیں یہاں وہاں
لوگوں نے شاعری کی تجارت بھی بہت

1986ء


مصحف اقبال توصیفی کی نذر

لہو کا سرخ سمندر رہا ہے آنکھوں میں

لہو کا سرخ سمندر رہا ہے آنکھوں میں
غروب شام کا منظر رہا ہے آنکھوں میں

یہ سوتی جاگتی سوچیں، خیال، یادیں، نیند
عجیب عرصۂ محشر رہا ہے آنکھوں میں

تمام عمر معطّر ہماری جان رہی
وہ ماورائی گلِ تر رہا ہے آنکھوں میں

وہ ایک نام کہ ہونٹوں پہ جم گیا جیسے
وہ ایک دھندلا سا پیکر۔۔۔۔ رہا ہے آنکھوں میں

یہ کیا ہوا کہ مقفّل تھا دل کا دروازہ
ہے کون شخص جو آ کر رہا ہے آنکھوں میں

1987ء


مری نوا کو خدا ایسی کچھ رسائی دے

مری نوا کو خدا ایسی کچھ رسائی دے
میں چُپ رہوں بھی تو نغمہ مرا سنائی دے

گناہ میں تو مزا پہلے بھی نہ تھا۔ اب تو
ثواب میں بھی نہ لذت کوئی دکھائی دے

گدائی کے لیے حاضر ہیں ہم،مگر پہلے
ملے یہ بھیک، کوئی کاسۂ گدائی دے

جز ایک لفظ وفا کچھ نہ لکھنا چاہوں میں
مرے قلم میں خدا اتنی روشنائی دے

تری گلی سے کہیں بھی نہ جا سکوں، یوں ہو
ہے گشت جرم، سزائے شکستہ پائی دے

1988ء


چھند دوہا

کیوں بیٹھے روتے اسے، جو تمہیں بھول گئی

کیوں بیٹھے روتے اسے، جو تمہیں بھول گئی
تم تو بھلکڑ تھے بھلے،بھول بھی جاؤ بھئی

ابھی ابھی تو آخری، چوڑی ٹوٹی تھی
کالی بلیّ کلموہی، رستہ کاٹ گئی

گاؤں سارا خوش ہوا کچھ جھگڑا نہ ہوا
اللہ دیا کے ساتھ جو، چل دی رام دئی

سچ پوچھو اک شہر میں، تم ہی شاعر ہو
وہی پرانی بات ہے پھر بھی بات نئی

صبح کو یوں نہ لپیٹ دو، دوہوں کا بستر
کچھ عبیدؔ جی پھِر کہو، بیتے روز کئی

1989ء


گل ہوئی ہر روشنی، بس ایک در روشن رہا

گل ہوئی ہر روشنی، بس ایک در روشن رہا
شہرِ تاریکی میں اک آنکھوں کا گھر روشن رہا

ذہن سوکھی گھاس تھا، ننھی سی چنگاری تھی یاد
وہ الاؤ جل اٹھا جو رات پھر روشن رہا

سارے گھر کی بتّیاں ایک ایک کر کے بجھ گئیں
چھاؤں تھی تاروں کی بس، اور ایک در روشن رہا

دن میں سایہ کُن رہیں بوڑھی دعائیں، رات کو
ایک چھوٹا سا دیا پیشانی پر روشن رہا

کشتیِ جاں تھی کہ سیلِ آب میں بہتی رہی
آندھیوں میں اک چراغِ بے سپر روشن رہا

1992ء


یہ اشک روکنے کا فن مجھے کوئی سکھا گیا

یہ اشک روکنے کا فن مجھے کوئی سکھا گیا
اتھاہ بحرِ بے کراں تھا، شعر میں سما گیا

وہ جس کی یاد بھی مجھے نہ اشک بار کر سکی
نہ جانے مجھ کو یاد کر کے کس طرح رلا گیا

جو ہاتھ فصل لوٹتے رہے تھے شل کیے گیے
ہری بھری خدائی میں زمیں کو چین آگیا

مرے خدا نے دو جہاں کی روشنی جو بخش دی
مری عبادتوں کا نور کس طرف چلا گیا

جو موسموں کی طرح لوٹ آ رہا تھا سال سال
وہ قیس شہر اب ہمیشہ کے لیے چلا گیا

بس اتنا یاد ہے کہ پو پھٹے غزل تمام تھی
اک ایک شعر جانے مجھ سے کس طرح کہا گیا

1992ء


وہ شخص جس کی یاد اب مرے گلے کا ہار ہے

وہ شخص جس کی یاد اب مرے گلے کا ہار ہے
وہ رات کی سیاہیوں میں چاندنی کا تار ہے

یہ کس کی بد دعا کی آگ اس چمن میں لگ گئی
بجھا بجھا بلوط ہے جلا جلا چنار ہے

یہ انجمن تو پہلے جھنجھناتی پائزیب تھی
یہ کیا ہو ہر ایک ساز اب شکستہ تار ہے

وہ مرے ساتھ ساتھ ہے، میں چاہے جس جگہ رہوں
اس آب و ہادِ عشق میں جدائی تو بہار ہے

یہ احمقانہ خواب ہے، عجیب بیوقوف ہو
کہ خود سے وہ کہے گی تم سے،مجھ کو تم سے پیار ہے

1992ء


تھے چھپے ہوئے پسِ کوئے یار چلے گئے

تھے چھپے ہوئے پسِ کوئے یار چلے گئے
وہ مرے جنوں کے نگاہ دار چلے گئے

ہمیں چاہے جیسی بھی نظر سے بھی تو نواز دے
وہ ترے کرم کے امیدوار چلے گئے

رہیں بے نتیجہ تمام خوں چکاں دستکیں
نہ کھلا مگر در انتظار ۔۔ چلے گئے

وہ جو چشمِ نم کبھی مسکرائی تھی اس طرح
جو بسے تھے دل میں غم، اشک بار چلے گئے

پڑے رہ گئے کئیٔ زخمی جسم نواح میں
وہ جو کج کلاہ تھے شہ سوار، چلے گئے

اسی رہ سے گزرے تھے اور لوگ بھی میرے بعد
مرے نقشِ پا کو مٹا کے یار چلے گئے

1993ء


یہ بھی کم نہیں، اس کے نام سے رابطہ تو ہے

یہ بھی کم نہیں، اس کے نام سے رابطہ تو ہے
خوش رہو میاں! اس کی یاد کا سلسلہ تو ہے

اک گلی بھی ہے شہر میں کہیں، ایک گھر بھی ہے
کم سے کم یہاں تم کو ایک شخص جانتا تو ہے

سوچو اس طرح بے حس آسمان ہے رحیم بھی
رنگ بدلے جب، ہر نظارے میں کچھ نیا تو ہے

اس کی دلبری کا ہے بھرم، کہ اپنا شیشۂ انا
اس سے جب ملیں، چھن سے کچھ کہیں ٹوٹتا تو ہے

جستجو کریں، جھپ کے دیکھ لیں، اس کے ہاتھ میں
کچھ حنا کے رنگ، درمیاں میں نام اک لکھا تو ہے

ہے یزید کون، کون ہے حسین، ہے کہاں فرات
کچھ پتہ نہیں، محشرِ خیال کربلا تو ہے

اتنے دن کے بعد کچھ کبت لکھے، بن گئی خبر
دل ٹھہر گیا، جاں کا چین بھی سانحہ تو ہے

1996ء


ان پلکوں تک بہہ آؤں

ان پلکوں تک بہہ آؤں
قطرہ قطرہ گر جاؤں

ربط ہے لفظ بھی چھوٹا سا
کیوں بیکار میں پھیلاؤں

خود بھی سمجھنا مشکل ہے
تم کو کیسے سمجھاؤں

پھر اس سے ملنے کے لئے
پھر اک بار بچھڑ جاؤں

مجھ کو اب آواز نہ دے
واپس شاید ہی آؤں

1998ء


کیسی آوارہ خو ہے

کیسی آوارہ خو ہے
دل کس رم کا آہو ہے

اس کو نہ دیکھیں، دیکھیں آج
دل پر کتنا قابو ہے

ہم بھی بس خاموش رہے
اس کی چپ تو جادو ہے

ابھی ابھی ہیں اشک تھمے
جاں میں سوندھی خوشبو ہے

کیا گلشن میں بہار آئی
کیا اک گل کی خوشبو ہے

اس کا کوئی نام نہ لے
اپنا چرچا ہر سو ہے

روٹھے تو مننا مشکل
اس میں بھی اپنی خو بو ہے

کیا مہکے ہیں دشت و در
اپنی غزل کا جادو ہے

2000ء


کیسا جادو سحر جگانے لگی

کیسا جادو سحر جگانے لگی
بسترِ غم پہ نیند آنے لگی

ذکر جب اس کا چھڑ گیا کل رات
ساری محفل ہی گنگنانے لگی

یاد نے آ کے دل پہ دستک دی
اور اسی پل میں نیند آنے لگی

کوچۂ جاں عجیب صحرا ہے
غم کی بارش بھی قہر ڈھانے لگی

اب تو سیرِ چمن بھی مشکل ہے
پھر کوئی یاد ہم کو آنے لگی

روٹھ جانا بھی اس سے مشکل ہے
وہ بھلا کیوں ہمیں منانے لگی

2002ء


کاسۂ دل ہے عطرداں اپنا

کاسۂ دل ہے عطرداں اپنا
یاد ہے اس کی، زخمِ جاں اپنا

اب کی ایسا ہے سائباں اپنا
نہ زمیں ہے، نہ آسماں اپنا

عشق میں کس کو کچھ ہوا حاصل
یہ تھا سودا ہی رائیگاں اپنا

نام اس کا ہر اک زباں پر ہے
ذکر پھیلا کہاں کہاں اپنا

لاکھ منظر ہوں تھامتے دامن
اب رکے گا نہ کارواں اپنا

عالم رنگ و بو نواح میں ہے
پیرہن اس کا، شہرِ جاں اپنا

اب تو ہندی میں کام کیجیے عبیدؔ
شاید اردو میں ہو زیاں اپنا

2003ء


چاندی سونا دیکھوں میں

چاندی سونا دیکھوں میں
مئی میں کیا دیکھوں میں

صبح سویرے اٹھتے ہی
کس کا چہرا دیکھوں میں

فرشِ خاک پہ سوؤں جب
سچّا سپنا دیکھوں میں

وہ تو میرے گھر میں ہے
کس کا رستا دیکھوں میں

یاہو1 کی ایک "ِنڈو"2 میں
اس کا مکھڑا دیکھوں میں

جب بھی، جہاں بھی چاہوں اسے
سامنے بیٹھا دیکھوں میں

آنکھوں میں رِم جھِم ہو جائے
جب اسے ہنستا دیکھوں میں

صبح اٹھنے کی جلدی میں
خواب ادھورا دیکھوں میں

بول یہ سندر سندر درشّیہ
کب تک تنہا دیکھوں میں

میرؔ تمہاری غزلوں میں
اپنا دُکھڑا دیکھوں میں

مانیٹر3 کے پردے پر
ایک ہی چہرا دیکھوں میں

اس کی یاد آئے جب بھی
مونا لیزا دیکھوں میں

تو ہی بتا تیرا ایسا روپ
دیکھوں یا نا دیکھوں میں

2003ء


ہزار یادوں نے محفل یہاں سجائی۔ ۔۔ پر

ہزار یادوں نے محفل یہاں سجائی۔ ۔۔ پر
جو نیند آتی ہے سولی پہ بھی، سو آئی ۔۔ پر

سلگتی ریت کو دو دن میں پھول جائیں نہ ہم
یہ ایک شعر ہے اپنی برہنہ پائی پر

میں فرشِ خاک پہ لیٹوں تو سوتا رہتا ہوں
ہزار خواب اترتے ہیں چار پائی پر

نہ جانے کب مری آنکھوں سے اشک چھن جائیں
بھروسہ اب نہیں کرتا ہے بھائی بھائی پر

عطا کرے مجھے اقلیمِ شعر کی شاہی
یہ شک نہیں ہے مجھے تیری کبریائی پر

2004ء


دعا کرو کہ دعا میں مری اثر ہو جائے

دعا کرو کہ دعا میں مری اثر ہو جائے
میں اس کا نام نہ لوں، اور اسے خبر ہو جائے

بس اب یہ آخری خواہش بچی ہے، اس کے حضور
یہ صرف سادہ مرا حرف معتبر ہو جائے

بس اک شرار خسِ خشک جاں کو کافی ہے
چلو کہ آج تماشہ یہ رات پھر ہو جائے

نہ کچھ گناہ میں لذت، ثواب میں نہ مزا
کروں نہ کچھ بھی، مگر زندگی بسر ہو جائے

بہار جذبوں پہ آئے، پر آنکھیں خشک رہیں
یہ بر و بحر مرا پھر سے بحر و بر ہو جائے

2004ء


یہ کشتِ غم ہے خدایا ہری بھری رکھنا

یہ کشتِ غم ہے خدایا ہری بھری رکھنا
جہاں بھی جائے نظر، سبز ہی نظر آئے

میں بھیگتا رہوں بارش میں جیسے ساری رات
جو خواب میں بھی کبھی اس کی چشمِ تر آئے

ہوائے تیز میں، جیسے کچھ آنکھ میں گر جائے
نہ کوئی بات ہو، بس یوں ہی آنکھ بھر آئے

میں اس کو چھوڑنا چاہوں، تو چھوڑنے کو مجھے
طویل فاصلے تک اس کی رہ گزر آئے

پتہ تو تھا کہ ہمارا مقام کیا ہوگا
ہم اس کی بزم میں سب جان بوجھ کر آئے

2005ء


میرا اس کا میل ہی کیا، کروں اس کا سوالی میں

میرا اس کا میل ہی کیا، کروں اس کا سوالی میں
وہ ہے اک مصروف سی ساعت، لمحۂ خالی نہیں

دیکھیں کب تک دیکھا،ان دیکھا کرتے ہیں لوگ
شعر ہیں اب بھی عروج پہ مائل، گو ہوں زوالی میں

ہوا کا جھونکا اس کو مہکا دے مجھے بکھرا دے
وہ آراستہ باغِ عدن ہے، ربعُ الخالی میں

کِرنوں یا پانی کو ترسنا دونوں کا ہی نصیب
وہ آمیزن بن کی دھرتی، قطب شمالی میں

قصے طوطا مینا کے اب سب کو بھول گئے
کس کا نام لئے یوں چہکوں ڈالی ڈالی میں

2005ء


تیرا روپ سنہرا ہوگا، ہم کوئی تجھ سے ہیٹے ہیں

تیرا روپ سنہرا ہوگا، ہم کوئی تجھ سے ہیٹے ہیں
اپنی وفا کی آگ میں تپ کر سونا بن کر نکھرے ہیں

چاندی کے سکوں کی کھن کھن جیسی ہے اسکی آواز
زنجیریں بجنے کی زباں میں ہم بھی باتیں کرتے ہیں

اس کے ہاتھ میں چاند اور سورج، آنچل میں جھل مل تارے
تم کہتے ہو رات اندھیری، ہم کو بہت یہ اجالے ہیں

کابکشاں کے زینے سے چھم چھم کوئی پری اتر آئے
اس کی یاد کے پیروں چل کر یوں اشعار اترتے ہیں

2005ء


تم وہاں پہ تنہا ہو، ہم یہاں اکیلے ہیں

تم وہاں پہ تنہا ہو، ہم یہاں اکیلے ہیں
آؤ آ کے مل جاؤ، دونوں وقت ملتے ہیں

وہ نہیں مقابل اب ورنہ اس چمن کے پھول
پہلے بھی مہکتے تھے، آج بھی مہکتے ہیں

راستے نہیں تھکتے، دیکھتے ہیں ہم بھی آج
ساتھ اپنے کتنی دیر، کتنی دور چلتے ہیں

ہے چمن تمام اس کا، ہم کو اس کا بس اک پھول
نیند اس کو بھاتی ہے،ہم کو خواب پیارے ہیں

بس ابھی تو اس نے چائے لا کے دی مگر یہ کیا!!
ہاتھ میں رسالہ ہے، جاگتے کے سپنے ہیں

2005ء


کچھ صدا صبح تک تو آئے گی

کچھ صدا صبح تک تو آئے گی
پیالیوں کی کھنک تو آئے گی

ایک پل کو ہی وہ لگا تھا گلے
اپنے تن سے مہک تو آئے گی

لاکھ رستے بدل کے گھر جاؤں
راہ میں وہ سڑک تو آئے گی

رات بھر اس امید پر جاگے
اک کرن صبح تک تو آئے گی

خشک آنکھوں کے سوکھے جنگل میں
آنسوؤں کی مہک تو آئے گی

رات ہونے تو دو، پھر اس کی آباد
سرِ نوکِ پلک تو آئے گی

آج صحرائے جان خشک سہی
آنسوؤں کی کمک تو آئے گی

اتنے دن بعد آج شعر کہے
چہرے پر کچھ چمک تو آئے گی

دکھ کے بادل برس چکیں تو عبیدؔ
ایک رنگیں دھنک تو آئے گی

2006ء


وہ جسے سن سکے وہ صدا مانگ لوں

وہ جسے سن سکے وہ صدا مانگ لوں
جاگنے کی ہے شب کچھ دعا مانگ لوں

اس مرض کی تو شاید دوا ہی ہیں
دے رہا ہے وہ، دل کی شفا مانگ لوں

عفو ہوتے ہیں آزار سے گر گناہ
میں بھی رسوائیوں کی جزا مانگ لوں

شاید اس بار اس سے ملاقات
بارے اب سچّے دل سے دعا مانگ لوں

یہ خزانہ لٹانے کو آیا بھی میں
اس کو ڈر ہے کہ اب جانے کیا مانگ لوں

اب کوئی تیر ترکش میں باقی نہیں
اپنے رب سے صدائے رسا مانگ لوں

جمع کرتا ہوں میں ظلم کی آیتیں
کس کے سر سے گِری ہے ردا،مانگ لوں

2006ء


سمجھو اسے شاعری ہماری

سمجھو اسے شاعری ہماری
یا دل کی کہو لگی ہماری

کہا چِت بھی تھی، پَٹ بھی تھی تمہاری
لو ۔۔ بات تو مان لی ہماری

پہلے ہی پتنگ کٹ چکی تھی
لو ڈور بھی لُٹ گئی ہماری

اب کس کی امید، کون آئے
اب شام بھی بجھ چلی ہماری

کچھ تھا کہ اٹھا رہا سر اپنا
دیکھو تو کج کلہی ہماری

افسانے سنے جو اس کی چُپ میں
کہتی رہی خامشی ہماری

2007ء